”فاطمی رضی اللہ عنہ وظیفہ صرف 1 عمل“

ہ ایک ایسا عمل ہے جو کہ حضوری کیفیت رکھنے والا ہے اور اس کے بارے میں نبی کریم ﷺ نے خاتون جنت بی بی فاطمہ ؓ کو یہ وظیفہ تجویز فرمایا کہ آپ اس وظیفہ کو کیا کریں تو انشاء اللہ جو بھی اس عمل کو کرے گا

اگر وہ کسی بھی پریشانی میں مبتلا ہوگا اس عمل کو کرنے کے بعد سجدہ میں جاکر اپنی حاجت کو طلب کرے گا تو اس حضوری کیفیت رکھنے والے عمل کے وسیلہ سے اللہ اس کی پریشانی کوختم فرما دیں گے اس کی حاجت روائی فرمائیں گے۔ایک ہی دن میں اللہ تعالیٰ آپ کی پریشانی کو ختم فرمادیں گے۔یہ وظیفہ بہت آسان ہے۔

جب بھی آپ کو کوئی پریشانی ہوتو آپ اس حضور ی کیفیت رکھنے والے کلمات کو پڑھ سکتے ہیں حضور کیفیت کا مطلب حاضر کیفیت ایسی کیفیت جو آپ کو اللہ کے سامنے حاضر کر دے اور آپ اللہ سے جو بھی مانگیں اللہ وہ آپ کو عطا فرمادیتے ہیں ۔انشاء اللہ بہت ہی آسان سا وظیفہ ہے لمبا چوڑا وظیفہ نہیں ہے۔ہمیشہ وظائف کو دل سے کیا کریں اور یقین کامل سے کیاکریں کہ میں جو اللہ سے مانگوں گا میرا اللہ اس کو دینے پر قادر ہے آپ نے ایک جگہ بیٹھ کر اول و آخر گیارہ مرتبہ درود شریف پڑھنا ہے

نشاء اللہ یہ ایسے کلمات ہیں جو آپ کو اللہ کے سامنے حاضر کردیں گے اور اللہ کے سامنے آپ جو بھی اللہ سے مانگیں گے وہ آپ کو عطا فرمادیا جائے گا کیونکہ ان کلمات کے بارے میں فرمایا گیا ہے کہ یہ اسم اعظم ہے اور اسم اعظم وہ کلمات ہوتے ہیں کہ جن کے ذریعہ سے مانگا جاتا ہے تو اللہ تعالیٰ اس دعا کو کبھی بھی رد نہیں فرماتے یہ وہ کلمات ہیں کہ جو آپ کو اللہ کے قریب لے جاتے ہیں یہ وہ کلمات ہیں کہ جس کے ذریعہ سے بندھے نصیب کھل جاتے ہیں

یہ وہ کلمات ہیں کہ ان کے ذریعہ سے اللہ سے جو بھی مانگا جاتا ہے اللہ پاک عطا فرمادیتے ہیں لیکن ہمیشہ یہ کوشش کیا کریں کہ جب بھی کوئی وظیفہ کریں جب بھی کوئی عمل کریں تو اللہ کو قادر مطلق مانا کریں اسم اعظم تووہی اسم اعظم ہے کہ جب اللہ کو پکاریں تو اللہ کو سب سے بڑا حاجت روا مانتے ہوئے اللہ کو مشکل کشا مانتے ہوئے اللہ سے مانگا جائے اور وہی الفاط وہی کلمات اسم اعظم بن جاتے ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.