مرد کی دو کمزوریاں

ہر مرد ہر عورت کے سر پہ ڈوپٹہ نہیں ڈال سکتا لیکن وہ کسی نامحرم کو دیکھ کہ نظر میں ضرور پیچی کر سکتا ہے

مارے معاشرے میں لڑ کی محبت میں نا کامی پر ے سب سے بڑا بدلہ خود سے لیتی ہے بڑابدلہ والدین کی مرضی سے شادی کر لیتی ہے
ہر انسان کی سوچ اور مزاج کا معیار ایک دوسرے سے مختلف ہوتا ہے کچھ لوگ رشتوں کو پورے خلوص دل سے نبھاتے ہیں اور کچھ لوگ صرف اپنے فائدے کے تحت اور منافقت کیساتھاپنے کردار کو جتنا اچھار کھ سکتے ہوں رکھو ، موت انسان کو مار سکتی ہے ۔ مگر اچھے کر دار والے ہمیشہ زندہ رہتے ہیں دلوں میں بھی ، اور لفظوں میں بھیانسان کی خطرناک دشمن اسکی منفی سوچ ہے جو اسکو سب کچھ ہونے کے باوجود پر یشان رکھتی ہے ہر بات اپڑھے انداز سے سوچیں زند گی جنت بن جاۓ گی ،،

جن رشتوں پہ وقت کے ساتھ ساتھ محبت کا چٹر کاؤ کیا جاۓ وہی تر و تازہ رہتے ہیں ورنہ آپ نے اندازہ تو لگا ہی لیا ہے کہ جو نجی استعمال نہ کی جاۓ تو وہ زنگ کنجی آلود ہو جاتی ہے ۔زند گی میں اگر انتخاب کا موقع ملے تو ٹاس کر لینا اس لیے نہیں کہ انتخاب میں آسانی ہو جائے بلکہ اس لیے کہ جب سکہ ہوا میں ہو گا تو پتہ چل جاۓ گا کہ دل کیا چاہتا ہے ۔۔ !کبھی کبھی آپ کے الفاظ ا یک ہنستابستا انسان مار دیتے ہیں اپنے الفاظ پر غور کیا کرو کیوں کے یہ دل کو زندہ اور مردہ کرتے ہیں !مرد کی دو کمزوریاں ہوتی ہیں جو عورت ان کمزوریوں کو جان لیتی ہے مرد اس عورت کا ہو جاتا ہے پہلی : مرد کی کمزوری آپ خود ہیں جو آپ کو نہیں پتا ، دوسری : خوبصورتی مرد کی کمزوری ہوتی ہے اس لئے خود کو وقت دیں ،

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.