اسرائیل کے معاملے میں نرمی دکھائیں

اگر وزیراعظم اسرائیل کو تسلیم کر لیتے تو پاکستان فیٹف کی گرے لسٹ سے نکل سکتا تھا، سینیئر صحافی عمران خان
وزیراعظم عمران خان کو فیٹف کی جانب سے کہا گیا تھا کہ اگر وہ اسرائیل کے معاملے میں نرمی دکھائیں تو پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالا جا سکتا ہے، جبکہ پاکستان کے معاشی استحکام میں بھی مدد دی جائے گی، لیکن عمران خان نے انکار کردیا تھا، سنیئر صحافی کا انکشاف

لاہور ( 01 نومبر2020ء) سینیئر صحافی عمران خان نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے انہیں بتایا تھا کہ اگر ہم اسرائیل کے مؤقف میں لچک پیدا کریں تو ہمیں ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکالا جا سکتا ہے ۔ سینیئر صحافی نے یوٹیوب چینل پر ایک ویڈیو میں انکشاف کیا کہ وزیراعظم عمران خان کو کئی ممالک کی جانب سے یہ آفر دی گئی کہ پاکستان اسرائیل کے معاملے میں نرمی پیدا کرے تو پاکستان کے معاشی حالات بہتر ہو سکتے ہیں ۔
جبکہ عمران خان خان نے یہ تمام آفرز ٹھکرا دی تھیں کیونکہ ان کا کہنا ہے کہ پاکستان کبھی اسرائیل کے معاملے پر پیچھے نہیں ہٹ سکتا ۔ عمران خان کو یہ آفر بھی کروائی گئی تھی کہ اگر وہ اسرائیل کے معاملے پر لچک پیدا کریں تو پاکستان گرے لسٹ سے بھی نکل سکتا ہے ۔ اپنے پروگرام میں صحافی عمران خان نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے ابھی نندن کی گرفتاری پر مجھ سےکہا تھا کہ “‘ جہاز تو ہمارا بھی گر سکتا تھا، یہ تو اللہ کا شکر ہے کہ پاک فوج نے بھارت کا جہاز مار گرایا، اگر ہمارا جہاز تباہ ہوتا تب بھی ہم پاک فوج کا ساتھ دیتے ، کیونکہ جنگ کی صورت میں جنگ فوج نے کرنی ہے اور ہم نے آرمی کو سپورٹ کرنا ہے ۔بھارت کی جانب سے یہ حملہ اسرائیلی سپورٹ سے ہوا ہے”” ۔ صحافی عمران خان نے کہا کہ ابھی نندن کی گرفتاری کے موقع پر اپوزیشن اور حکومت ایک پیج پر تھے، کسی نے اس وقت اس واقعے میں کوئی متنازعہ بیان نہیں دیا تھا، صرف مولانا فضل الرحمان نے کہا تھا کہ ابھی نندن کی رہائی بیرونی دباؤ کی وجہ سے ہوئی ہے، اس کے علاوہ کسی اپوزیشن رہنما نے اس عمل کی مخالفت نہیں کی تھی، بلکہ شہباز شریف نے کہا تھا کہ آج 65 کی جنگ کی یاد تازہ ہوگئی جبکہ بلاول بھٹو نے پائلٹ کی رہائی کے معاملے پر کہا تھا کہ وزیراعظم کا یہ احسن اقدام ہے، بھارت کو خطے میں امن قائم رکھنے کے لیے عمران خان کی طرف سے مذاکرات کی پیش کش قبول کرے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.