عمرہ کرنے کو بے تاب پاکستانیوں کے لیے خوش خبری

عمرہ کرنے کو بے تاب پاکستانیوں کے لیے خوش خبری
اب پاکستانی گھر بیٹھے آن لائن عمرہ کے لیے بکنگ کروا سکیں گے
ریاض (یکم نومبر2020ء ) کورونا وبا کی وجہ سے کئی ماہ تک عمرہ ادا کرنے پابندی عائد رہی، گزشتہ ماہ سعودی حکومت نے پہلے اور دوسرے مرحلے کے تحت عمرہ کی ادائیگی کی اجازت دی تھی جو مملکت میں مقیم تارکین اور مقامی افراد تک محدود تھی۔ تاہم اب کل یکم نومبر سے تیسرے مرحلے کے تحت مختلف ممالک سے عمرہ زائرین کو بھی سعودی عرب آنے کی اجازت ہو گی۔

تیسرے مرحلے میں مسجد الحرام میں روزانہ 20 ہزار افراد عمرہ کی سعادت حاصل کرسکیں گے ۔سعودی حج وعمرہ کمیٹی کے رکن اور مکہ معظمہ میں ایوان صنعت وتجارت کی ہوٹلنگ کمیٹی کے رکن ھانی العمیری نے کہاہے کہ دنیا بھر سے بہت بڑی تعداد میں فرزندان توحید عمرہ کی ادائیگی کی خواہش رکھتے ہیں۔ عمرہ کی ادائیگی مزید آسان بنانے کے لیے حکومت نے عمرہ پروگرام آن لائن فروخت کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
اس پروگرام کی خریداری کے بعد عمرہ کے خواہش مند حضرات آن لائن بکنگ کر سکیں گے۔عرب ٹی وی کے مطابق انہوں نے کہا کہ عمرہ پروگرام خریدنے والا کوئی بھی غیرملکی مسلمان عمرہ ویزہ حاصل کرنے کے بعد ہوائی جہازوں کی ٹکٹ، مواصلات، ہوٹلوں میں قیام،عمرہ کی ادائی سے متعلق معاون کمپنی اور دیگر ضروری مراحل کی بکنگ کرسکتا ہے۔ العمیری کا کہنا تھا کہ اس وقت سعودی عرب میں عمرہ کی سہولت فراہم کرنے والی 531 کمپنیاں اور ٹور آپریٹرز کام کر رہے ہیں۔عمرہ کی بکنگ کے لیے اس وقت 32 آن لائن بین الاقوامی پلیٹ فارم کام کر رہے ہیں جب عمرہ مناسک کے حوالے سے 6500 غیرملکی ایجنٹ مصروف عمل ہیں۔ وزارت حج و عمرہ کے ایک سینیئر عہدے دار نے بتایا ہے کہ دیگر ممالک سے آنے والے تمام زائرین کے لیے انتظامات مکمل ہو چکے ہیں ۔ دیگر ممالک کے زائرین السعودیہ ایئر لائنز کے ذریعے بھی آ سکیں عمرہ زائرین کو سرحدی چوکیوں، سمندری بندرگاہوں اور ایئرپورٹس کے ذریعے مملکت داخلے کی اجازت ہو گی، جنہیں مملکت میں پہنچتے ساتھ ہی خصوصی بسوں کے ذریعے مسجد الحرام اور مسجد نبوی پہنچایا جائے گا۔تمام عمرہ زائرین کو حرم شریف کے ارد گرد واقع تھری اور فائیو سٹار ہوٹلوں میں رہائش دی جائے گی۔ ہر عمرہ زائر کے لیے مملکت آمد کے فورا ً بعد تین روز آئسولیشن میں رہنا لازمی ہو گا۔ جس کے بعد کورونا سے محفوظ ہونے کی رپورٹ پر انہیں حفاظتی تدابیر کے ساتھ عمرہ کرایا جائے گا۔

Sharing is caring!

Comments are closed.