داخلی و خارجی پالیسی تبدیل کردی

متحدہ عرب امارات نے تارکین وطن کیلئے داخلی و خارجی پالیسی تبدیل کردی

یواےای نے ماضی اور حالیہ ایام میں کچھ فیصلے کیے ہیں، کسی بھی ملک کو مداخلت کا کوئی اختیار نہیں، وہاں پر مقیم پاکستانی ان قوانین پر عمل کریں۔ وفاقی نمائندہ خصوصی مذہبی ہم آہنگی علامہ طاہر اشرفی اسلام آباد 20 نومبر2020ء) متحدہ عرب امارات نے تارکین وطن کیلئے داخلی و خارجی پالیسی تبدیل کردی، وزیراعظم کے نمائندہ خصوصی مذہبی ہم آہنگی علامہ طاہر اشرفی نے کہا کہ یواےای نے ماضی اور حالیہ ایام میں کچھ فیصلے کیے ہیں۔ کسی بھی ملک کو مداخلت کا کوئی اختیار نہیں، وہاں پر مقیم پاکستانی ان قوانین پر عمل کریں، وزیراعطم پاکستانیوں کے مسائل کے حل کیلئے کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ متحدہ عرب امارات برادر اسلامی ملک ہے۔ متحدہ عرب امارات کے پاکستان کے ساتھ مضبوط اور مستحکم تعلقات ہیں۔ متحدہ عرب امارات کے فیصلوں میں کسی ملک کو مداخلت کا کوئی اختیار نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہر ملک اپنے حالات اور واقعات کے مطابق اپنی داخلہ اورخارجہ پالیسی بناتا ہے۔ یواےای نے اپنی داخلہ اور خارجہ پالیسی کے مطابق ماضی، حالیہ ایام میں فیصلے کیے ہیں۔ کسی بھی ملک کے شہری یا ملک کو مداخلت کا کوئی اختیارنہیں اور نہ ہونا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ یواے ای میں رہنے والے پاکستانیوں سے گزارش ہے کہ وہ جس مقصد کیلئے گئے ہیں وہ اپنا کام کریں۔ عمران خان مشرق وسطیٰ میں رہنے والے پاکستانیوں کے مسائل کے حل کیلئے کوشش کر رہے ہیں۔ طاہر اشرفی نے کہا کہ پاکستانی یواےای کی داخلہ اور خارجہ پالیسی سے متعلق ایسا عمل نہ کریں جو وہاں کے قوانین کی خلاف ورزی ہو۔ یواےای میں رہنے والے پاکستانی وہاں کے قوانین پرعمل کریں۔ یواےای میں رہنے والے پاکستانی وہاں کی داخلہ اور خارجہ پالیسی سے متعلق کوئی سرگرمی اختیار نہ کریں۔یاد رہے سینئر تجزیہ کار راؤف کلاسرا کا کہنا ہے کہ پاکستان ، سعودی عرب اور یواے ای میں تعلقات خراب ہوگئے ہیں۔ یواے ای نے پاکستانیوں کیلئے ورک پرمٹ اور سیاحتی ویزہ دینا بھی روک دیا ہے، یہ سعودی عرب کا اسرائیل کو تسلیم کرنے کیلئے دباؤ نہیں بلکہ تعلقات میں خرابی وزیراعظم عمران خان کے ترکی، قطر اور ایران کے ساتھ قریبی تعلقات پر ہوئی ہے۔ مزید بتایا گیا کہ مسئلہ حل نہ کیا گیا تو پاکستان کیلئے مشکلات مزید بڑھ جائیں گی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.