حکومت کی مذاکرات کی پیشکش مسترد کردی

پی ڈی ایم کی 31 دسمبرتک تمام ارکان اسمبلی کو استعفے جمع کروانے کی ہدایت

حکومت کی مذاکرات کی پیشکش مسترد کردی ہے، اسٹیئرنگ کمیٹی کے اجلاس میں کل پہیہ جام ، شٹرڈاؤن اور لانگ مارچ، جلسو ں، مظاہروں کا شیڈول جاری کیا جائے گا، لاہور جلسہ تاریخی اور حکومتی تابوت میں آخری کیل ہوگا۔ صدر پی ڈی ایم مولانا فضل الرحمان کی میڈیا سے گفتگو
اسلام آباد ( 08 دسمبر2020ء) پی ڈی ایم کے صدر مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ 31 دسمبر تک تمام ارکان اسمبلی استعفے قائدین کے پاس جمع کروا دیں گے، حکومت کی مذاکرات کی پیشکش مسترد کر دی ہے، اسٹیئرنگ کمیٹی کے اجلاس میں کل پہیہ جام ، شٹرڈاؤن اور لانگ مارچ، جلسو ں، مظاہروں کا شیڈول جاری کیا جائے گا،لاہورجلسہ تاریخی اور حکومتی تابوت میں آخری کیل ہوگا۔انہوں نے پی ڈی ایم اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی جانب سے این آراو لینے کی درخواست آئی لیکن پی ڈی ایم نے مذاکرات کی درخواست کو مسترد کردیا ہے، وہ اس قابل نہیں ان سے مذاکرات کیے جائیں، 31 دسمبر تک تمام پارٹیوں کے پارلیمانی اراکین اپنے استعفے پارٹی قائدین کے پاس جمع کروا دیں، ان میں صوبائی اور قومی اسمبلی کے ممبران شامل ہوں گے، کل اسٹیئرنگ کمیٹی کا اجلاس ہوگا، جس میں پہیہ جام ، شٹرڈاؤن اور مختلف اضلاع میں جلسو ں اور مظاہروں کا شیڈول جاری کیا جائے گا، اسلام آباد کی جانب لانگ مارچ کی تاریخ کا بھی اعلان کیا جائے گا۔اجلاس سے متعلق جو بھی خبریں چلائی گئیں ان کی تردید ہوگئی ہے، ہم عوام کو مایوس نہیں ہونے دیں گے، عوام کا ردعمل پرجوش ہے، اس میں مزید اضافہ ہوگا، لاہور کا جلسہ تاریخی ہوگا یہ حکومتی تابوت میں آخری کیل ہوگا۔ہم گرفتاری کے بارے میں کبھی نہیں سوچا کہ گرفتاری کیا چیز ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو فرق پڑچکا ہے، کرسی کی چولیں ہل چکی ہیں، بس ایک دھکا دینے کی ضرورت ہے۔ اگر پی ڈی ایم نے استعفے دے دیے ت وپھر استعفے واپس نہیں چاٹیں گے۔وہ ان کے ساتھ کھڑے ہیں یا نہیں کھڑے ، ہماری تحریک دھاندلی کرنے والوں کیخلاف ہے، دھاندلی کرنے والے خود سوچیں اس پر عوام کا کیا جواب آئے گا۔سردیاں ہیں لیکن ہماری سیاسی گرمی درجہ حرارت ٹھی کردے گی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.