پی ڈی ایم کامیاب ہو سکتی ہے

بظاہر عمران حکومت کو کوئی خطرہ نہیں البتہ آج پی ڈی ایم کامیاب ہو سکتی ہے

اگر ایک کام ہو گیا تو ۔۔۔۔۔۔۔ اعزاز سید کی تہلکہ خیز پیشگوئی
لاہور (ویب ڈیسک) عمران حکومت کو ہٹانے کے لیے سرگرم اپوزیشن اتحاد نے آج مینار پاکستان پر جلسہ کرنے کا تہیہ واعلان کر رکھا ہے ۔ پی ڈی ایم اس جلسے کو کامیاب بنانے کے لیے پرعزم ہے جبکہ حکومت کا ارادہ اسے ناکام بنانے کا ہے ۔ اس حوالے سے سینئر صحافی اپنی ایک خصوصی رپورٹ میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔لاہور میں ہونیوالے سیاسی جلسے کسی بھی تحریک میں اہم کردار ادا کرتے ہیں ، مسلم لیگ (ن) بظاہر اپنے گڑھ میں ایک بڑا جلسہ کرنے میں کامیاب بھی ہو جائے گی کیونکہ اس جلسے میں تمام اپوزیشن جماعتوں کے ووٹر اور سپورٹر شرکت کریں گے ، لیکن سوال یہ ہے کہ اس جلسے میں کوئی قابل ذکر کامیابی حاصل کی جاسکے گی ؟ کیا عمران حکومت کو گرایا جا سکے گی یا گرانے کی طرف کوئی پیش قدمی ہو سکے گی ؟ موجودہ سیاسی حالات کے پیش نظر میرا تجزیہ یہی ہے کہ پی ڈی ایم کی تحریک فوری طور پر مطلوبہ نتائج دیتی دکھائی نہیں دے رہی ہاں خدانخواستہ اس دوران کوئی حادثہ ہو گیا تو نتائج کچھ بھی ہو سکتے ہیں ، پانسہ پلٹ سکتا ہے اور اپ سیٹ بھی ہو سکتا ہے پاکستان کی تاریخ اس طرح کے واقعات سے بھری پڑی ہے ۔ایک طرف پی ڈی ایم کی تمام سیاسی جماعتیں عمران حکومت سے نجات چاہتی ہیں تو دوسری طرف میاں نواز شریف اسٹیبلشمنٹ کے بڑوں کے پیچھے پڑے ہیں کیونکہ وہ انکی راہ میں رکاوٹ ہیں ۔ حقیقت یہ ہے کہ نواز شریف اور انکی صاحبزادی کی جانب سے شروع کردہ تنقید رکوانے کے لیے اسٹیبلشمنٹ کے بڑے مذاکرات کر رہے ہیں ۔ لیکن مذاکرات اور بات چیت کی یہ بیل منڈھے چڑھتی نظر نہیں آرہی ۔ اور پھر موجودہ حالات میں اسٹیبلشمنٹ کو عمران خان اور عمران خان کو اسٹیبلشمنٹ کی ضرورت ہے ، فی الحال حکومت کی رخصتی کا کوئی امکان نہیں ۔ لیکن یہ بھی بتا دوں کہ اپوزیشن کا احتجاج رائیگاں نہیں جائے گا ۔

Sharing is caring!

Comments are closed.