آپ سوشل ڈسٹنسنگ کو مدنظر نہیں رکھتے

اگر آپ سوشل ڈسٹنسنگ کو مدنظر نہیں رکھتے تو ماسک پہن کر بھی آپ کورونا وائرس سے نہیں بچ سکتے

کپڑے کے ماسک پر اس قدر جراثیم موجود ہوتے ہیں جو قریب بیٹھے شخص کو آسانی سے متاثر کر سکتے ہیں،طبی ماہرین
انگلینڈ (اُ۔ 24 دسمبر2020ء) یہ سال تاریخ میں رقم رہے گا کیونکہ ایک عرصے بعد ایسی وبا نے دنیا کو اپنی لپیٹ میں لیا ہے کہ جس کی ہر آنے والی لہر پہلی سے زیادہ مہلک ثابت ہو رہی ہے اور یہ ایسی وبا ہے جو ایک ملک سے دوسرے ملک اپنی ہیئت تبدیل کرنے کی صلاحیت بھی رکھتی ہے۔جب سے کورونا آیا ہے اس سے بچاﺅ کے لیے آغاز ہی میں دو چیزوں کا پتا چل گیا تھا کہ ایک تو ماسک لازمی پہننا ہے اور دوسرا سینی ٹائزر کا استعمال لازمی کرنا ہے۔اس کے بعد جیسے جیسے تحقیق آگے بڑھتی گئی ویسے ویسے ہدایات ملتی گئیں کہ اس موذی وبا سے بچنے کے لیے عوام کو کیا کرنا ہے۔لہٰذا اگلی اہم ہدایت سوشل ڈسٹنسنگ کی تھی جس میں اس بات کی تاکید کی گئی کہ ایک دوسرے سے کم سے کم چھے فٹ کا فاصلہ ضرور رکھنا ہے۔لہٰذا اب نئی تحقیق میں ماہرین نے پانچ قسم کے ماسک پر تجربہ کیا کہ یہ ماسک پہن کر کورونا وائرس ایک شخص سے دوسرے میں منتقل ہونے کی استطاعت رکھتا ہے یا نہیں۔ان ماسک میں این 95، سرجیکل ماسک،کپڑے کا ماسک،کپڑے کا ڈبل تہہ والا ماسک اور ڈبل تہہ والا نمی والاماسک شامل تھا۔ان ماسک کو بار بار ایک مشین کے ذریعے ٹیسٹ کیا گیا جس نے فضا میں ڈراپ لیٹ پھینکے۔یہ ڈراپ لیٹس ایسے تھے جو ناک یا منہ میں گھسنے کی صلاحیت رکھتے تھے۔اس تجربے میں این 95 نے سو فیصد ذرات کو منہ اور ناک میں جانے سے روک لیا جب کہ کپڑے کے ماسک نے چھیانوے فیصد ذرات کو اندر جانے سے روکا۔جبکہ ڈبل تہہ والے ماسک نے ساٹھ فیصد ذرات کو کامیابی سے روکا۔جبکہ ماہرین کا کہنا ہے کہ اس طرح کا محض ایک ڈراپ بھی وائرس کے ملین اجزا لیے ہوتا ہے اور متاثرہ شخص کو اپنی لپیٹ میں لینے کے لیے اس موذی وائرس کا ایک ڈراپ بھی کافی ہے۔لہٰذا آپ نے اگر ماسک پہنا بھی ہے اور آپ سماجی فاصلہ اختیار نہیں کرتے تو آپ کا ماسک آپ کو کبھی بھی وائرس سے محفوظ نہیں رکھ سکتا۔اس لیے ماہرین کی تجویز ہے کہ بلاضرورت گھر سے باہر نہیں جانا چاہیے اور رش والی جگہ پر جانے سے ویسے ہی گریز کرنا چاہیے۔گھر کے افراد اور دیگر لوگوں سے سوشل ڈسٹنس پر رہنا اپنی عادت بنا لیجیے کیونکہ ماسک استعمال کرنے اور لاکھ احتیاط کے باوجود بھی آپ اس وبا سے محفوظ نہیں رہ سکتے۔ماسک کا استعمال ضروری ہے مگر اس کے ساتھ سوشل ڈسٹنسنگ بنیادی ضرورت ہے تبھی آپ اس موذی وائرس سے بچ سکیں گے۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *