”مثانے کی کمزوری کا روحانی قرآنی علاج“

”مثانے کی کمزوری کا روحانی قرآنی علاج“

اے ایمان والو! اللہ اور اسکے رسول کی پکار پر لبیک کہو جبکہ رسول تمہیں اس چیز کی طرف بلائے جو تمہیں زندگی بخشنے والی ہے۔اس آیت کریمہ میں یہ بتایا گیا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے قرآنی آیات میں ہمارے لئے زندگی ودیعت کررکھی ہے چنانچہ اگر کسی بیمار یا سست خلیے پر اللہ تعالیٰ کا کلام پڑھا جائے تو وہ خلیہ تروتازہ ہوجاتا ہے۔اس میں زندگی بحال ہوجاتی ہے اور امراض کی مدافعت کی قدرت بڑھ جاتی ہے۔ یہیں سے ہمیں یہ روشنی بھی ملتی ہے کہ مخصوص امراض پر مخصوص قرآنی آیات پڑھ کر پھونکنے سے اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم کی بدولت شفا ملتی ہے۔یہ بات تردید کے ادنیٰ خوف کے بغیر پورے وثوق سے کہی جاسکتی ہے کہ قرآن پاک میں تمام امراض کے لئے شفا ہے۔ یہ امراض ذہنی ہوں یا جسمانی ہوں یا جادو ٹونے وغیرہ کا نتیجہ ہوں۔ شفا کیلئے ضروری ہے کہ مریض کا پختہ عقیدہ بھی یہی ہو کہ قرآنی آیات کے پھونکنے سے اسے مرض سے نجات مل جائیگی۔ وجہ یہ ہے کہ صحیح عقیدہ اگر سو فیصد نہیں تو 50فیصد علاج ضرور ہوگا۔

 

اللہ تعالیٰ نے قرآن پاک کی ہر آیت میں مرض پر اثر انداز ہونے والی خفیہ زبان ودیعت کررکھی ہے جسے پڑھ کر پھونکنے سے مرض چلاجاتا ہے۔ یہ الگ بات ہے کہ ہمیں شفا کا باعث بننے والی اس زبان کا علم نہیں جسے اللہ تعالیٰ قرآن پاک میں سموئے ہوئے ہے۔ہمیں قرآنی آیت پڑھنے کے سلسلے میں محنت کرتے رہنا ہے۔ ہمیں یہ یقین صادق رکھنا ہے کہ قرآنی آیات پڑھ کر پھونکنے سے ہمیں شفاملے گی۔ہمیں معلوم ہونا چاہئے کہ قرآن پاک خود مریض کو پڑھنا چاہئے۔ جدید ترین ریسرچ سے ثابت ہوا ہے کہ مریض پر سب سے زیادہ اثر خود اسکی اپنی آواز کا ہوتا ہے۔ کسی بھی انسان کی آواز کے مقابلے میں خود مریض کی آواز بیمار خلیوں پر زیادہ اثر ڈالتی ہے۔ مریضوں کو ہمارا مشورہ یہی ہوگا کہ وہ اپنے مرض سے متعلقہ قرآنی آیتیں خود پڑھ کر اپنے اوپر پھونکیں۔ اسے علاج کے سلسلے میں خود کفایتی یا از خود علاج کا نام دے سکتے ہیں۔

 

بعض اوقات مریض بڑی مشکل میں ہوتا ہے ۔ وہ نہ تو مطلوبہ توجہ سے قرآن پڑھ پاتا ہے اور نہ ہی صحیح طریقے سے قرآنی آیات کی تلاوت کرسکتا ہے۔ ایسی حالت میں کسی جھاڑ پھونک کرنے والے سے مدد لی جاسکتی ہے۔ آیات شفا کی تلاوت کرنے والے کی توجہ کا محور مرض ہو ،وہ اس سوچ کیساتھ قرآنی آیات پڑھے گویا مریض آیات کریمہ کی برکت سے بالکل شفایاب ہوچکا ہے۔آج آپ کو پیشاب کی ہر طرح کی تکلیف بندش اگر یہ تکالیف میڈیسن سے ختم نہیں ہوتی یا ختم ہوتی ہے تو عارضی ہوتی ہےچند دنو ں کے بعد پھر تکلیف شروع ہوجاتی ہے ۔ پیشاب میں رکاوٹیں پیدا ہوجاتی ہیں۔ سورۃ اخلاص گیارہ مرتبہ پڑھیں اس کے اول وآخر گیارہ گیارہ مرتبہ درود ابراہیمی پڑھ کر پانی میں دم کریں یہ پانی اسے پورے دن میں وقفے وقفے کے بعد پلاتے رہیں ۔ جتنا زیادہ سے زیادہ پانی پیا جائے اتنا ہی اس کیلئے فائدہ ہوگا ۔ پہلے دن ہی پتا چل جائیگا کہ پیشاب کی بند ش یا جس طرح کی تکلیف ہے پہلے دن ہی فائدہ نظر آجائیگا اللہ تعالیٰ کے فضل وکرم سے دوسرے یا تیسرے دن مکمل طور پر تکلیف ختم ہوجائیگا ۔

 

 

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!