”چقندر کا یہ راز جان کر آپ اسے استعمال کرنے پر مجبور جایئں گے“

”چقندر کا یہ راز جان کر آپ اسے استعمال کرنے پر مجبور جایئں گے“

جسم میں موجود زہریلے مواد سے نجات کے لئے لوگ مہنگے علاج اور ادویات استعمال کرتے ہیں مگر برطانوی سائنسدانوں نے اس مقصد کے لئے چقندر کا حیران کن فائدہ بتا دیا ہے۔ویب سائٹ justnaturallyhealthy.com کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ چقندر جسم سے زہریلے مادوں کو خارج کرنے کے لیے بہترین چیز ہے۔ اس میں ایسے اجزاءپائے جاتے ہیں جو خون کو صاف کرنے اور اس سے زہریلے مادوں کو خارج کرنے کا کام کرتے ہیں۔

 

اس مقصد کے لیے رات کو سونے سے پہلے چقندر کھانا چاہیے یا اس کا جوس پینا چاہیے۔رپورٹ کے مطابق چقندر میں نائٹریٹ پایا جاتا ہے جو جسم کو توانائی دینے کے ساتھ ساتھ خون پیدا کرنے اور نظام انہضام کو درست رکھنے میں اہم کردار ادا کرتاہے۔ حالیہ دنوں ایک تحقیق کی گئی جس میں سائنسدانوں نے دو دو درجن سے زائد رضاکاروں کو دو گروپوں میں تقسیم کرکے انہیں چقندر کا جوس پینے کو دیا۔ ان میں سے ایک گروپ کے جوس میں سے نائٹریٹس کے اجزاءنکال لیے گئے تھے۔ چند ہفتوں بعد دیکھا گیا کہ اس گروپ کے لوگ زیادہ تیز اور زیادہ دیر بھاگ سکتے تھے جن کے جوس میں نائٹریٹس کے اجزاءموجود تھے۔ اس کے برعکس دوسرے گروپ کے لوگ بہت جلد تھکاوٹ کا شکار ہو جاتے تھے۔

 

چقندر بھی ایک ایسی سبزی ہے جس کی جڑ کو بھی ہم غذا کے طور پر استعمال کرتے ہیں اس کو دو طرح سے استعمال میں لایا جاتا ہے ایک اس کا سلاد بنایا جاتا ہے دوسرا اسے ابال کر بھی کھایا جاتا ہے لیکن ا کے علاوہ اس کا جوس بھی پسند کیا جاتا ہے-گرمیوں میں عام طور پر لوگ اسے گاجر کے جوس کے ساتھ ملا کر استعمال میں لاتے ہیں اس طرح اس کی افادیت میں اور اضافہ ہو جاتا ہے- چقندر میں شکر بھی پائی جاتی ہے چقندر میں کاربوہائیڈریٹس ، پروٹین، آئرن، شکر، فائبر، سوڈیم، زنک، پوٹاشیم، میگنیشیم، وٹامن بی اور وٹامن کے پایا جاتا ہے۔چقندر کو کھانے یا اس کا جوس بنانے سے پہلے اسے اچھی طرح صاف یا دھو لیں جوس سے بننے والی جھاگ کو ہٹا کر جوس پئیں ہمیشہ تازہ چقندر کا جوس استعمال کریں- اسے فرج میں سٹور نہ کریں فرج والا جوس نقصان دہ ہوتا ہے- چقندر کا جوس گاجر، مالٹا، کنو، آڑو اور سیب وغیرہ کے ساتھ ملا کر ہی پیا جائے تو مفید رہتا ہے۔ سبزیوں میں پالک، ادرک اور ٹماٹر کا رس ملا کر استعمال لا سکتے ہیں۔ سو گرام چقندر میں 43 کیلوریز اور چکنائی صفر پرسنٹ ہوتی ہے ۔

چقندر معدے کی جلن کا خاتمہ کرتی ہےچقندر پیشاب آور ہےچقندر جسم میں خون پیدا کرتی ہےچقندر پرانی سے پرانی قبض کو دور کرتی ہےکمزوری اور تھکاوٹ میں چقندر مفید ہوتا ہےچقندر بلڈ پریشر کے مریضوں کے لئے فائدہ مند ہے کیونکہ اس کے کھانے سے شریانیں پھیل جاتی ہیں اور خون بآسانی گردش کرتا رہتا ہے اس کے لئے ضروری ہے کہ روزانہ اس کا جوس پیا جائےچقندر کے استعمال سے دماغی صلاحیتوں میں اضافہ ہوتا ہےچقندر کھانا پٹھوں کے لئے فائدہ مند ہےمشقت یا کمزوری میں چقندر کا استعمال مفید ہوتا ہےچقندر کھانے والوں کو بواسیر کا مرض نہیں ہوتاچقندر میں اینٹی آکسائیڈنٹس ہونے کی وجہ سے کئی خطرناک بیماریوں سے محفوظ رہتے ہیںچقندر میں موجود فولاد خون کی کمی یا حاملہ خواتین کے لئے بھی فائدہ مند ہوتا ہےچقندر کھانے سے دل کی کارکردگی بہتر ہو جاتی ہےچقندر کمزور افراد کے وزن میں اضافہ کرتی ہےچقندر کھانا ڈپریشن کے مریضوں کے لئے بھی فائدہ مند ہوتا ہے

 

چقندر کھانے سے نیند بہتر طور پر آتی ہےچقندر یادداشت کو بھی بہتر بناتی ہےچقندر کا جوس نزلہ و زکام سے بھی محفوظ رکھتا ہےچقندر کا جوس جسمانی زخم بھرنے میں بھی مدد کرتا ہےچقندر چہرے کی پھنسیاں اور پھوڑوں کو ختم کرنے کے لئے بھی مفید ہوتا ہےچقندر جگر اور لبلبہ کی خرابیوں کو بھی دور کرتا ہے۔چقندر کھانے سے ریاح پیدا ہوتی ہےچقندر دیر سے ہضم ہونے والی سبزی ہےچقندر بادی سبزی ہے اسے کھانے سے بھاری پن کا احساس ہوتا ہےچقندر میں شکر کافی مقدار میں موجود ہوتا ہے جو ذیابیطس کا سبب بن سکتا ہےچقندر سے تیزابیت کا خطرہ بڑھ جاتا ہےچقندر کے زیادہ استعمال سے اسہال کو خطرہ بڑھ جاتا ہےتین سال سے کم عمر کے بچوں کو چقندر کا جوس نہیں دینا چاہیے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!